Motivational Story-Aap Ki Qader o Qeemat

Motivational Story-Aap Ki Qader o Qeemat | Article No. 19

Motivational Story-Aap Ki Qader o Qeemat is about a teacher who uses a simple exercise with a 5000 rupee note to impart a powerful lesson to her students. Despite crumpling, dirtying, and devaluing the note, the students still value it the same. This story beautifully illustrates how our worth and value or “Aap Ki Qader o Qeemat” are not determined by external circumstances but by the intrinsic qualities we possess. Discover the enduring message of self-worth and resilience in this thought-provoking tale on Urdu World Pk.

Motivational Story-Aap Ki Qader o Qeemat

Motivaional Story-Aap Ki Qader o Qeemat

آپ کی قدر و قیمت

نئے تعلیمی سال کے آغاز پر، ایک کلاس ٹیچر اپنے طلباء کے سامنے 5000 روپے کا نوٹ نکالتی ہے۔ وہ ان سے کہتی ہے، ” آپ میں سے جو یہ رقم لینا چاہتے ہیں وہ اپنے ہاتھ اوپر کریں”۔ کمرے میں ہر کوئی اپنا ہاتھ اوپر کرتا ہے، جس پر وہ نوٹ لیتی ہے اور اسے اپنے ہاتھوں میں مسل دیتی ہے. پھر پوچھتی ہے، “یہ نوٹ اب کون لینا چاہتا ہے؟” سب کے ہاتھ اوپر ہی رہتے ہیں۔ اس کے بعد وہ نوٹ کو فرش پر گراتی ہے اور اسے اپنے جوتے سے زمین پر رگڑتی ہے، اور واپس اٹھا کر پوچھتی ہے۔ ’’اب کون لے گا؟‘‘ سب ہاتھ اوپر ہی رہتے ہیں۔ تو وہ کہتی ہے “اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا تھا کہ میں نے نوٹ کے ساتھ کیا کیا، آپ سب پھر بھی اسے لینا چاہتے ہیں کیونکہ اس کی قدر و قیمت وہی ہے۔ یہاں تک کہ اس کی کریز اور گندگی میں مسلنے کے باوجود اس کی قیمت اب بھی 5000 ہے۔ “ہمارے ساتھ بھی ایسا ہی ہے۔ آپ کی زندگی میں ایسے ہی وقت آئیں گے جب آپ گرے ہوئے ہوں گے، زخمی ہوں گے اور کیچڑ میں ہوں گے۔ پھر بھی اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ کچھ بھی ہو آپ اپنی جو قدر و قیمت بنائیں گے وہ آپ کی ذات کا حصہ ہو گی، آپ کبھی بھی اپنی قدر نہیں کھوئیں گے۔” آپ کے پاس دنیا کو دینے کے لیے کوئی ہُنر کوئی سکل ہو گا جو آپ کی قدر و قیمت طے کرے گا.

Aap Ki Qader o Qeemat

At the beginning of the new academic year, a teacher pulls out a 5000 rupee note in front of her students.
 She says to them, “Whoever wants to take this amount, raise your hand.” Everyone in the room raises their hand, and she takes note of it and crumples the note in her hands.
 Then she asks, “Who wants to take this note now?” Everyone keeps their hands raised. She then drops the note on the floor and rubs it with her shoe before picking it up again and asking, “Who wants to take it now?” Still, everyone keeps their hands raised.
 She says, “It doesn’t matter what I did with the note, you still want to take it because its value remains the same. Even after its creases and dirt, its worth is still 5000 rupees.”
 The same applies to our lives. There will be times in your life when you feel broken, wounded, and covered in mud. Nevertheless, it doesn’t make any difference because no matter what happens, you determine your worth (Aap Ki Qader o Qeemat). It becomes a part of your identity, and you should never lose sight of your value. You have a skill or talent to offer the world that will establish your worth.

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *