Shab Khoon – Munir Niazi Poetry

Shab Khoon-Munir Niazi Poetry

In Urdu Lyrics

شب خون

منیر نیازی
جب بن سیاہ رات کے تاروں سے بھر گئے
کنج چمن میں چمکے شگوفے نئے نئے
مجھ کو ہوا نے بات سجھائی عجیب سی
بادل میں ایک شکل دکھائی عجیب سی
چاند آسماں کی سیج پہ سویا ہوا ملا
رنگ گل انار میں لتھڑا ہوا ملا
اے عاشقانِ حسن ازل غور سے سنو
میں برگ بے نوا تو نہیں ہوں کہ چپ رہوں
دل کے کسی بھی شعلے کو عریاں نہ کر سکوں
میں تیغ ہاتھ میں لیے سوئے فلک گیا
جذبوں کے رس سے مہکے ہوئے چاند تک گیا
کافی تھا ایک وار مری تیغ تیز کا
مہتاب کے بدن سے لہو پھوٹ کر بہا

In SMS

Shab Khoon

Munir Niazi

Jab Bin Syah Raat Ke Taroon Se Bhar Gay

Kanj Chaman Mein Chamke Shagofe Nay Nay

Mujh Ko Hawa Ne Baat Samjhai Ajeeb Si

Badal Mein Aik Shakal Dikhai Ajeeb Si

Chand Asman Ki Saij Pe Soya Huwa Mila

Rang Gul-e-Anar Mein Luthrra Huwa

Ay Ashqan-e-Hussan e Azal Ghor Se Suno

Mein Barg Be-Nawa To Nahi Hun Ke Chup Rahu

Dil Ke Kisi Bhi Shule Ko Uryan Na Kar Sakun

Mein Taigh Hath Mein Liy Su-e-Falak Gya

Jazbon Ke Ras Se Mehke Huwe Chand Tak Gya

Kafi Tha Aik War Mari Taigh-e-Taz Ka

Mehtab Ke Badan Se Lahu Phoot Kar Baha

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *